...................... .................

مودی سرکار کی پالیساں، بھارت معاشی بحران میں پھنس گیا

بھارت کے سابق وزیراعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ کا کہنا ہے کہ نریندر مودی حکومت کی متعصب پالیسیوں اور نااہلی کی وجہ سے ملک معاشی بحران میں پھنس گیا ہے اور اس کا مستقبل تاریک نظر آتا ہے۔
ایچ ٹی وی پاکستان کے مطابق بھارت کے سابق وزیراعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ کا ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ نریندر مودی حکومت کی تفریق والی پالیسیوں اور نااہلی کی وجہ سے ملک معاشی بحران میں پھنس گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ بھارت کی معاشی صورتحال نے مودی سرکار کے دعوؤں کی قلعی کھول کے رکھ دی ہے۔
انہوں نے کہا کہ ہندوستانی معیشت کوسمت دکھانے والے ممبئی شہر اور ریاست مہاراشٹر بھی بحران کی زد میں ہیں اوران دونوں ریاستوں میں گزشتہ پانچ سال میں سب سے زیادہ کارخانے اور فیکڑیاں بند ہوگئی ہیں۔
انہوں نے معاشی بدحالی کی مکمل ذمہ داری مودی حکومت پرعائد کرتے ہوئے کہا کہ بھارت میں پیدا ہونے والی مندی کی وجہ سے چین سے درآمدات تیزی سے بڑھی ہے۔ حالیہ مدت میں درامدات 1.22 لاکھ کروڑ روپے بڑھی ہے۔
بھارت میں سرمایہ کاری نہیں ہورہی ہے جس کی وجہ سے روزگار کا مسئلہ بڑھتا جارہا ہے اور نوجوان کم پیسوں میں کام کرنے پر مجبور ہیں۔
انہوں نے بتایا کہ دیہی علاقوں میں مایوسی کا ماحول ہے اور بے روزگاری عوام کو بھٹکنے پر مجبور کر رہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کی ناقص اقتصادی پالیسیوں کی وجہ سےمعاشی مندی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اوراس کا اثرعام لوگوں، کسانوں اور مزدوروں پر پڑا ہے۔
انہوں نے انکشاف کیا کہ کسانوں کی خودکشی میں مہاراشٹر اوّل نمبر پر ہے۔ سابق بھارتی وزیراعظم منموہن سنگھ کا کہنا تھا کہ پونا شہر کو ملک کی آٹو انڈسٹری کا حب کہا جاتا تھا لیکن اب یہ صنعت بھی بری طرح زوال کا شکار ہو چکی ہےجبکہ مودی سرکار آٹو انڈسٹری کی بحالی کے لئے کوئی موئثر کردار ادا نہیں کر رہی، حکومتی پالیسیوں سے عدم دلچسپی نمایاں ہے۔

جواب لکھیں