...................... .................

پاکستان پر حملہ، چین پر حملہ تصور کیا جائے گا

چین کے صدر شی جن پنگ نے کہا کہ پاکستان میں سول اور فوجی قیادت ملکر کام کررہی ہے، پاکستان پر حملہ چین پر حملہ تصور کیا جائے گا۔
ایچ ٹی وی پاکستان کے مطابق چینی صدر نے کہا کہ پاکستان نے ماضی میں چین کی مدد کی ہے۔پاکستان میں سول اور فوجی قیادت ملکر کام کررہی ہے جو اچھی بات ہے۔
چینی صدر نے کہا کہ ہم پاکستانی معیشت کو پھلتے پھولتے دیکھنا چاہتے ہیں، چین پاکستان کی ہر شعبے میں مدد کرے گا۔
ان کا کہنا تھا کہ جب بھی پاکستان کو ضرورت پڑی چین خاموش نہیں بیٹھے گا۔ جبکہ پاکستان کے ساتھ تعلقات میں بھی کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔ پاکستان کی خودمختاری کیلئے چین تعاون جاری رکھے گا۔
دوسری جانب آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے چین کو پاکستان میں صنعتیں منتقل کرنے کا کہا۔
چین نے ایف اے ٹی ایف میں پاکستان کو تعاون کی یقین دہانی کروائی۔ وزیراعظم نے چینی صدر کو کہا کہ مودی کو حالات سے آگاہ کریں۔ کشمیر پر ظلم ہوگا تو پاکستان خاموش نہیں رہ سکتا۔ کشمیر ہماری رگوں میں خون کی طرح دوڑتا ہے۔ جب ضرورت پڑی پورے وسائل استعمال کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیریوں نے ابھی تک بھارت کے سامنے سر نہیں جھکایا۔
جبکہ چین کے صدر نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ پاکستان پر حملہ، چین پر حملہ تصور کیا جائے گا۔

جواب لکھیں