...................... .................

یہ غازی، یہ تیرے پراسرار بندے

یہ غازی، یہ تیرے پراسرار بندے
جنھیں تُو نے بخشا ہے ذوق خدائی
حو نیم ان کی ٹھوکر سے صحرا و دریا
سمٹ کر پہاڑ ان کی ہیبت سے رائی
دو عالم سے کرتی ہے بیگانہ دل کو
عجب چیز ہے لذتِ آشنائی
شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن
نہ مال غنیمت نہ کشور کشائی

جواب لکھیں