...................... .................

تہ دام بھی غزل آشنا رہے طائران چمن تو کیا

تہ دام بھی غزل آشنا رہے طائران چمن تو کیا
جو فغاں دلوں میں تڑپ رہی تھی، نوائے زیر لبی رہی
ترا جلوہ کچھ بھی تسلی دل ناصور نہ کر سکا
وہی گریۂ سحری رہا، وہی آہِ نیم شبی رہی
نہ خدا رہا نہ صنم رہے، نہ رقیب دیر و حرم رہے
نہ رہی کہیں اسد اللہی نہ کہیں بولہی رہی
مرا ساز اگرچہ ستم رسیدۂ زخمہ ہائے عجم رہا
وہ شہید ذوق وفا ہوں میں کہ نوا مری عربی رہی

جواب لکھیں