...................... .................

آئندہ کبھی اس سے محّبت نہیں کی جائے

آئندہ کبھی اس سے محّبت نہیں کی جائے
کی جائے تو پھر اس کی شکایت نہیں کی جائے
اس معرکہ عشق میں اے اہلِ محبت
آساں ہے عداوت پہ عداوت نہیں کہ جائے
یہ دل کہ اْسی زْود فراموشی پہ مائل
اور ذہن بضد اس سے محبت نہیں کی جائے
ہم اہلِ سخن ہیں تو روایت کے مطابق
مصلوب کیا جائے رعایت نہیں کی جائے
یہ لوگ تماشا ہیں تو پھر ان سے جنوں میں
کوئی بھی بیاں دل کی حکایت نہیں کی جائے

جواب لکھیں